پیر‬‮   19   فروری‬‮   2018

کنٹرول لائن پر بھارتی فائرنگ رکوانے کیلئے گائے فارمز قائم کرنے کا مطالبہ

پارلیمنٹ ہاؤس سے(ناصر نقوی)قومی اسمبلی میں لائن آف کنٹرول پر بھارتی فوج کی فائرنگ رکوانے کیلئے پاکستانی سرحد پر گائے کے فارمز قائم کرنے کا دلچسپ مطالبہ سامنے آگیا، قومی اسمبلی میں بچوں کیساتھ زیادتی کے خلاف قانون سازی،:قومی اسمبلی کے اجلاس میں ایک بار پھر عدم دلچسپی کا مظاہرہ سامنے آیا جبکہ جمشیددستی کی طرف سے نواز شریف کے خلاف قراداد لانے کا مطالبہ بھی کیا گیا۔قومی اسمبلی کا اجلاس چھ منٹ تاخیر سے 10:36پرسپیکر سردار ایازصادق کی زیر صدارت شروع ہوا تو اس وقت ایوان میں صرف 20اراکین موجود تھے جس میں سے حکومتی اراکین کی تعداد 12تھی جس میں ایک وفاقی وزیر بھی شامل تھے۔قومی اسمبلی کے اجلاس میں وقفہ سوالات کے دوران جماعت اسلامی کے بونیر سے رکن اسمبلی شیر اکبر خان نے وزیر مملکت برائے پانی و بجلی عابدشیر علی نے شیر اکبر خان کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ اگلی مرتبہ عید قربان پر آپ کا گوشت ٹھیک رہے گا۔سپیکر نے کہا کہ نیند میں بھی شیر اکبر خان کو بونیر ہی یاد آتا ہے۔وقفہ سوالات ہی کے دوران لائن آف کنٹرول پر بھارتی فوج کی فائرنگ رکوانے کیلئے پاکستانی سرحد پر گائے کے فارمز قائم کرنے کا دلچسپ مطالبہ سامنے آگیاجب پارلیمانی سیکرٹری سردار منصب علی ڈوگر نے کہا کہ ہندو گائے کی پوجا کرتے ہیں ،اس لئے اگر پاکستانی سرحد پر گائے کے فارمز قائم کر دیئے جائیں تو بھارتی فوج گائے کے احترام میں پاکستان کے سرحدی علاقے میں فائرنگ نہیں کریگی۔سابق وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان کی ایوان میں آمد پر مختلف حکومتی اراکین اسمبلی نے آ کر ان سے ملاقاتیں کیں۔وفاقی وزیر رانا تنویر حسین نے اپوزیشن بنچوں پر جا کر سابق سپیکر ڈاکٹر فہمیدہ مرزا سے ملاقات کی جبکہ مسلم لیگ ن کی اراکین اسمبلی طاہرہ اورنگذیب اوردیگر نے بھی فہمیدہ مرزا سے ملاقاتیں کیں۔ قومی اسمبلی کے اجلاس میں ایک بار پھر عدم دلچسپی کا مظاہرہ سامنے آیااور پورا وقت کورم پورا نہیں تھا تاہم کسی رکن اسمبلی نے کورم کی نشاندہی نہیں کی۔ قومی اسمبلی میں بچوں کیساتھ زیادتی کے خلاف قانون سازی کی گئی ۔قومی اسمبلی میں جمشیددستی کی طرف سے نواز شریف کے خلاف قراداد لانے کا مطالبہ بھی کیا گیا جس میں انہوں نے کہا کہ مجیب الرحمن کی جو تائید کرتا ہے اس کے خلاف قرارداد آنی چاہیئے

© Copyright 2018. All right Reserved