اتوار‬‮   16   دسمبر‬‮   2018

مسلم لیگی اجلاس شدید بدنظمی کا شکار ،10کارکنان زخمی



اسلام آباد (خصوصی نیوز رپورٹر) مسلم لیگ(ن) کے مستقل صدر کے انتخاب کے لئے ہونے والا جنرل کونسل کا اجلاس ناقص سکیورٹی انتظامات کے باعث شدید بدنظمی کا شکار ہو گیا۔ جس میں مسلم لیگ(ن) کے 10کارکنان زخمی ہو گئے ۔ کنونشن سنٹر کے داخلی راستوں کے دروازے اور شیشے توڑ دیئے گئے جبکہ کارکنان کی سکیورٹی اہلکاروں کے ساتھ ہاتھاپائی میں خواتین کارکنان کو بھی دھکے دے کر ہال سے نکال دیا گیا۔ تفصیلات کے مطابق منگل کے روز مسلم لیگ (ن) کے صدر کے انتخاب کے لئے کنونشن سنٹر میں ہونے والے مسلم لیگ (ن) کے مرکزی جنرل کونسل کے اجلاس میں شدید بدنظمی ہوئی جس میں10کارکنان زخمی ہو گئے۔ اجلاس سے قبل مسلم لیگ(ن) کے کارکنوں اور سکیورٹی اہلکاروں میں ہاتھا پائی ہوئی جس سے کنونشن سنٹر کے داخلی راستوں کے دروازے اور شیشے ٹوٹ گئے جبکہ سکیورٹی اہلکاروں نے خواتین کارکنان کو بھی دھکے دے کر ہال سے باہر نکال دیا۔مسلم لیگ (ن) کے کارکنوں نے سکیورٹی اہلکاروں کے خلاف احتجاج بھی کیا اس موقع پر میڈیا کو اندر جانے سے روک دیا گیا۔ مسلم لیگ (ن) کے راہنما آصف کرمانی نے کہا کہ صرف سرکاری میڈیا کو اندر جانے کی اجازت ہے پرائیویٹ میڈیا کو ہم نے نہیں بلایا۔ٹوٹے ہوئے شیشوں اور دروازوں کو چھپانے اور گزرگاہ بننے سے روکنے کے لئے ان کے آگے الماریاں رکھ دی گئیں۔ مسلم لیگ (ن) کے کارکنوں نے وزیر مملکت کیڈ طارق فضل چودھری کو گھیر لیا جبکہ ایس پی احمد اقبال کارکنوں کو دھمکیاں دیتا رہا کہ کوئی اندر گیا تو ٹانگیں توڑ دوں گا۔ بعدازاں مسلم لیگ (ن) کے رہنماؤں کی مداخلت پر صورت حال پر قابو پا لیا گیا جبکہ ریسکیو 1122 کے اہلکاروں نے زخمیوں کو طبی امداد دی 



© Copyright 2018. All right Reserved