جمعہ‬‮   21   ستمبر‬‮   2018

زرورزور کا استعمال سینٹ الیکشن میں جمہوریت کا جنازہ نکالا گیا حکومتی واتحادی اراکین اسمبلی

اسلام آباد (نامہ نگار خصوصی)قومی اسمبلی میں مختلف سیاسی جماعتوں کے ارکان نے سینیٹ انتخابات پر تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ سینیٹ انتخابات میں جمہوری لوگوں نے جمہوریت کا جنازہ نکالا، سینٹ ہاؤس آف فیڈریشن ، اسکے الیکشن میں زر اور زور کا استعمال ہوگا تو پاکستان کی بنیادیں ہل جائیں گی، جس طرح کا سینیٹ لایا گیا ہے اسی طرح کی قومی اسمبلی بھی لانے کی کوشش کی جا رہی ہے،جس انداز میں سینٹ الیکشن ہوئے ہیں یہ پاکستان کی بربادی کی بنیاد رکھ دی گئی، سینٹ کا اس دفعہ کا الیکشن غلیظ اور غیر شفاف طریقے سے ہوا،تمام اداروں کا گرینڈ جرگہ ہونا چاہیے،پاکستان میں اداروں کے درمیان ٹکراؤ خطرناک حد تک بڑھ گیا ہے،مسلم لیگ جب ہارتی ہے تو اسے ہارس ٹریڈنگ اور جمہوریت یاد آ جاتی ہے، ایسا قانون بنایا جائے کہ جو رکن اپنا ووٹ بیچے گا اسے مینار پاکستان پر سرعام پھانسی دی جائے،حکومت اپنے گریبان میں جھانکے اور اپنے اراکین کو عزت دینا سیکھے، بلوچستان میں مسلم لیگ (ن) نے اپنے ارکان کو بھیڑ بکریاں سمجھا۔ ان خیالات کا اظہارصاحبزادہ طارق اللہ،محمود خان اچکزائی،سید نوید قمر،نعیمہ کشور،شیریں مزاری،افتخارالدین و دیگر نے قومی اسمبلی میں نکتہ اعتراض پر کیا۔ نکتہ اعتراض پر بات کرتے ہوئے محمود خان اچکزئی نے کہا کہ میں انتہائی اہم مسئلے پر اپنی آئینی ڈیوٹی پوری کرنے کھڑا ہوا ہوں نہ میں پاگل ہوں نہ میں زندگی سے بیزار ہوں۔ تین قسم کے لوگ آئین کے تحفظ کی قسم کھاتے ہیں‘ فوجی‘ ججز اور پارلیمنٹرینز، آئین سے کھیلا جارہا ہے سینٹ ہاؤس آف فیڈریشن ہے اگر اس کے الیکشن میں زر اور زور کا استعمال ہوگا تو پاکستان کی بنیادیں ہل جائیں گے۔ بلوچستان میں سینیٹ الیکشن ہورہے تھے تو میں نے کہا تھا کہ وہاں ایک فوجی افسر مداخلت کررہا ہے وہ لوگوں کو ڈرا رہا ہے سینٹ الیکشن پاکستان کی بربادی کی بنیاد رکھ دی گئی ہے۔ جب نواز شریف کو نکالا گیا تو میں نے کہا کہ جمہوری اور غیر جمہوری قوتوں کی لڑائی شروع ہوگئی ہے۔ اس کی پہلی جنگ ہم ہار چکے ہیں اگر ووٹ بیچنا جرم نہیں تو صادق اور جعفر کو بھی معاف کردو نوید قمر نے کہا کہ حکومت پہلے دن سے پارلیمنٹ کو وہ درجہ دیتی جو کہ دینا چاہئے تھا تو شاید ہم یہ دن نہیں دیکھتے جب وقت آتا ہے تو ہم جمہوری بھی ہوجاتے ہیں‘ جب وقت نکل جاتا ہے تو ہم فرعون بن جاتے ہیں صاحبزادہ طارق اﷲ نے کہا کہ سینٹ کا اس دفعہ کا الیکشن غیر شفاف طریقے سے ہوا۔ ٹی وی پر ہم سن رہے ہیں کہ بھیڑ بکریوں کا میلہ لگا ہوا تھا ڈاکٹر رمیش کمار نے کہا کہ براہ راست الیکٹورل سسٹم کے ذریعے سینٹ بنتی تو جو ہوا وہ نہیں ہوتا۔ شیریں مزاری نے کہا کہ ۔(ن) لیگ اگر ہار گئی تو گالی گلوچ کرنا قابل قبول نہیں۔رکن قومی اسمبلی طاہرہ اورنگزیب نے کہا کہ جب سینیٹ چیئرمین کے انتخاب کا نتیجہ آیا تو حامد الحق نے نعرہ لگایا اور وہ اپنا توازن برقرار نہیں رکھ سکے اور دوسرے آدمی پر گر گئے ، پیپلز پارٹی کی رکن عذرا فضل پیچوہو افتخار الدین نعیمہ کشور الیکشن کمیشن ہارس ٹریڈنگ پر سخت ایکشن لے۔ انہوں نے کہا کہ عدالتوں میں سینیٹرز کی دوہری شہریت پر تو نوٹس لے لیا جاتا ہے مگر ہارس ٹریڈنگ پر عدالتیں خاموش رہتی ہیں شازیہ مری شاہ جی گل آفریدی نے کہا کہ ہارس ٹریڈنگ اور سینیٹ انتخابات میں تیسری قوت کی مداخلت کی تحقیقات کیلئے پارلیمانی کمیٹی تشکیل دی جائے 


© Copyright 2018. All right Reserved