اتوار‬‮   24   جون‬‮   2018

بیشتر سیاسی جماعتوں نے ووٹوں کے اندراج بارے تجاویز دیدیں

اسلام آباد (خبرنگارخصوصی ) ملک بھر کی بیشتر سیاسی جماعتوں نے ووٹوں کے اندراج کا عمل تیز کرنے بالخصوص خواتین کے ووٹوں کا اندراج جلد از جلد کرنے کیلئے ضلعی حکومتوں اور مقامی انتظامیہ کا سٹیک ہولڈرز بنانے سے متعلق تجاویز دیدیں ،جبکہ چیف الیکشن کمشنر جسٹس سردار رضا نے ووٹوں کے عمل کو مکمل کرنے کیلئے سیاسی جماعتوں کے تعاون کے بغیر نا ممکن قرار دیدیا ،منگل کے روز خواتین کے عالمی دن کے موقع پر خواتین کے ووٹوں کے اندراج کو جلد مکمل بنانے سے متعلق منعقدہ سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے چیف الیکشن کمشنر جسٹس سرداررضا نے کہا کہ عام انتخابات کیلئے خواتین ووٹوں کے اندراج کا عمل جلد از جلد مکمن بنانے کیلئے خصوصی اقدامات کیئے جا رہے ہیں ،دور حاضر میں مردوں کے شانہ بشانہ خواتین کا کردار اہم ہے ،اور الیکشن کمیشن کے فرائض میں شامل ہے کہ وہ آئندہ عام انتخابات سے قبل ووٹوں کے عمل کو پایہ تکمیل تک پنچایا جائے،چیف الیکشن کمشنر نے مزید کہا کہ الیکشن کمیشن کی جو زمہ داریاں ہیں ان کو پوری ایماندری سے نبھایا جائے گا ،تاکہ کسی سے حق تلفی نہ ہو سکے ،چیف الیکشن کمشنر نے مزید کہاکہ ووٹوں کے جلد اندراج کیلئے ہمارا کام جاری ہے بالخصوص خواتین کے ووٹوں کا عمل بھی جاری ہے لیکن اس میں ہمیں عام شہری سے لیکر تمام سیاسی سسٹم کی سپورٹ درکار ہے تب ہی یہ ممکن ہو گا ۔ووٹ ایک قومی فریضہ ہے اور ہم اس فریضے کی ادائیگی کی تکمیل کیلئے ہر ممکن کوشیش کرینگے ،تاکہ عوام کا جمہوری عمل اپنے پایہ تکمیل تک احسن طریقے سے پنچ سکے ،بعدازان سمینار میں ملک کی سیاسی جماعتوں کے نمائندوں میں نیئر حسین بخاری ،شیری رحمان ،پاکستان تحریک انصاف ،قومی وطن پارٹی ،مسلم لیگ ن ،اور دیگر سیاسی جماعتوں کے نمائندوں نے شرکت کی اور اپنی اپنی تجاویز بھی پیش کیں ،سابق چیرمین سینٹ نیئر حسین بخاری ،شیری رحمان نے تجاویز پیش کیں کہ نادرا کی جانب سے بعض جگہوں پر شکایات آرہی ہیں کہ اندراج کا عمل سست روی کا شکار ہے ،اس لیئے ہمیں ووٹوں کے صیح اندراج کیلئے ڈور ٹو ڈور جانا ہو گا تب ہی اس جمہوری عمل کی تکمیل کیلئے ہم اپنا فیضہ ادا کر پائیں گیں ،بلوچستان سے نمائندگی کرنے والے سیاسی جماعتوں کے نمائندون نے تجاویز کے ساتھ شکایات بھی کیں ان کا کہنا تھا کہ بلوچستان کے بیشتر ووٹروں کے شناختی کارڈز بلاک ہیں جس کیلئے ہمیں خصوصی اقدامات کرنے ہونگے ،سمینار میں قومی وطن پارٹی سے تعلق رکھنے والی سابق وزیرمملکت انیسہ زیب طاہر خیلی ،عوامی نیشنل پارٹی کی بشری گوہر کا کہنا تھا کہ کے پی کے میں ووٹون کا اندراج بہتر انداز میں نہیں ہو پا رہا جس کیلئے ضروری ہے کہ وہاں وسائل میں اضافہ کیا جائے ،اور ضلعی حکومتوں کے تعاون کے بغیر ممکن نہیں اس لیئے ضلعی حکومتوں کا تعاون بھی حاصل کیا جائے ،سمینار میں انیسہ زیب نے انکشاف کیا کہ یہ عمل بالکل غلط ہے کہ ووٹنگ والے دن خواتین کو فورس کیا جاتا ہے ،اور یہ عمل صرف ووٹنگ کا شرح تناسب درست کرنے کیلئے کیا جاتا ہے ،اس کیلئے بھی میکنزم بنایا جائے ،بشری گوہر نے الیکشن کمیشن سے مطالبہ کیا کہ ووٹون کے اندراج کیلئے ملک بھر میں ایمرجنسی نافذ کی جانے چاہیئے ،اور اس کیلئے قانون سازی کی ضرورت ہے ،سمینار سے مسلم لیگ ن کے مہتاب خان نے کہا کہ الیکشن کمیشن اپنے گولز اس وقت تک تکمیل نہیں کر سکتی جب تک نادرا اپنا کام مکمل نہیں کر لیتی ،نادرا کارڈ بنانے کا عمل جاری رکھے کیونکہ اس وقت بھی لوگ لائنوں میں کھڑے ہوکر ووٹ اندراج نہیں کروا پاتے ،سیمینار میں یہ بھی مطالبہ کیا گیا ،کہ ہر ضلع میں خواتین کے ووٹوں کے اندراج کیلئے سٹاف میں اضافہ کیا جائے ،اور دو کی بجائے تین شفٹیں کر دی جائیں تاکہ نادر ا کا کام جلد پایہ تکمیل تک پنچ سکے ،سمینار میں الیکشن کمیشن اور نادرا حکام نے بریفنگ بھی دی 


loading...
© Copyright 2018. All right Reserved