جمعرات‬‮   18   اکتوبر‬‮   2018

نیب نے شہباز شریف کے اثاثوں کی چھان بین کا آغاز کردیا

ن لیگ کے صدر کے غیر قانونی اثاثوں کی تحقیق کیلئےعلیحدہ ٹیم تشکیل
ایف بی آر سے شہباز کا 10 سالہ ٹیکس ریکارڈ اور مختلف بینکوں سے اکاؤنٹس کی تفصیلات طلب
لاہور (نیوز ایجنسیاں) قومی احتساب بیورو (نیب) نے پاکستان مسلم لیگ (ن) کے صدر اور سابق وزیر اعلیٰ پنجاب میاں شہباز شریف کے خلاف 'غیر قانونی' اثاثوں کی تحقیقات کا بھی آغاز کر دیا۔ رپورٹ کے مطابق ذرائع کا کہنا تھا کہ نیب لاہور نے شہباز شریف کے غیر قانونی اثاثوں کی چھان بین کے لیے ایک علیحدہ ٹیم تشکیل دی ہے۔اس کے لیے فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) سے ان کا 10 سالہ ٹیکس ریکارڈ اور مختلف بینکوں سے اکاؤنٹس کی تفصیلات طلب کی گئی ہیں، اس کے علاوہ لاہور ڈیولپمنٹ اتھارٹی (ایل ڈی اے) اور کیپیٹل ڈیولپمنٹ اتھارٹی (سی ڈی اے) سے ان کے نام پر موجود جائیدادوں اور ایکسائز ڈپارٹمنٹ سے بھی معلومات مانگی گئی ہیں۔ذرائع کا کہنا تھا کہ نیب نے تحقیقات کا آغاز ان اطلاعات پر کیا جس میں شہباز شریف کو معلوم ذرائع سے حاصل آمدنی سے زائد کے اثاثے بنانے کا مرتکب قرار دیا گیا تھا ۔دورانِ تحقیقات جب شہباز شریف سے ان کے اثاثوں کے بارے میں پوچھا گیا تو ان کا کہنا تھا کہ ان کے صاحبزادے سلمان شہباز خاندانی کاروبار کے معاملات سنبھالتے ہیں، سلمان شہباز کو ارسال کیے گئے نوٹس میں کہا گیا کہ 'دورانِ تفتیش ملزم شہباز شریف نے یہ بیان دیا ہے کہ ان کے اثاثوں، آمدنی اور اخراجات کے تمام معاملات کی نگرانی آپ کرتے ہیں، آپ ان تمام معلومات سے واقف اور تمام دستاویزات رکھتے ہیں اس لیے آپ سے درخواست کی جاتی ہے کہ مشترکہ تحقیقاتی ٹیم (جے آئی ٹی) کے سامنے پیش ہوں اور اپنے ہمراہ تمام اثاثوں کی دستاویزات لائیں۔'نیب کے نوٹس میں سلمان شہباز سے بیرونِ ملک فروخت کی گئی جائیدادوں ، ذرائع آمدن کی دستاویزات ، مکمل انکم ٹیکس اور ویلتھ ریٹرنز اور پاکستان یا ملک سے باہر کمپنیوں میں کی گئی سرمایہ کاری اور حصص کی معلومات بھی طلب کی گئی ہیں۔

شہباز شریف اثاثے

© Copyright 2018. All right Reserved