پیر‬‮   19   ‬‮نومبر‬‮   2018

مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج کے ہاتھوں تباہ ہونےوالے گھروں کے مکین سردی میں کھلے آسمان تلےرہنے پر مجبور

قابض فورسز بیگناہ شہریوں کو قتل کرنے کیساتھ مکانات کو بھی گولہ باری سے تباہ کردیتی ہیں
بھارتی پولیس ملبہ بھی نہیں ہٹانے دیتی،ہمسایوں کے گھر رہنے پر مجبور ہیں،مکینوں کی دہائی
سرینگر (نیوز ایجنسیاں) مقبوضہ کشمیر میں قابض بھارتی فورسز محاصروں اور تلاشی کی کارروائیوں کے دوران بے گناہ شہریوں کو قتل اور زخمی کرنے کے ساتھ ساتھ رہائشی مکانات کو بھی گولہ باری اور بارودی موادکے ذریعے تباہ کردیتی ہیں ۔ تباہ ہونے والے مکانات کے مکین سردی میں کھلے آسمان تلے زندگی بسر کرنے پر مجبور ہو جاتے ہیں۔ کشمیر میڈیا سروس کے مطابق بھارتی فوجیوں نے گزشتہ ہفتے ترال کے علاقے چھان قطار میں دو رہائشی مکانات مارٹر گولے مار کر تباہ کر دیئے تھے ۔ تباہ شدہ مکانات کے مکینوں نے ذرائع ابلاغ کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ اپنے مکانات کا ملبہ ہٹا کر عارضی شیڈ بنانا چاہتے ہیں تا کہ سردی کے موسم میں گزارسکیں لیکن بھارتی پولیس انہیں ملبہ بھی نہیں ہٹانے دیتی ۔ ایک معمر شحص غلام محمد میر اور ان کے بھائی ثناء اللہ میر نے کہا کہ بھارتی پولیس نہ تو انہیں ملبہ ہٹانے دے رہی اور نہ ہی خود اسے ہٹانے کا بندوبست کر رہی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ چھت میسر نہ ہونے کی وجہ سے وہ اپنے ہمسائیوں کے گھر رہنے پر مجبور ہیں۔ خدیجہ نامی ایک خاتون نے کہا کہ گھر نہ ہونے کی وجہ سے وہ سخت مشکلات کا شکار ہیں اور انہیں سمجھ نہیں آرہی کہ وہ سردی کا موسم کیسے گزار یں گے۔
مکین آسمان تلے

© Copyright 2018. All right Reserved