پیر‬‮   19   ‬‮نومبر‬‮   2018

وزیر قانون نے ٹاسک 100روز پورے ہونے سے قبل مکمل کر لیا

دو کالم،،،،،،،،،،،،،،،،،،
وزیر قانون نے ٹاسک 100روز پورے ہونے سے قبل مکمل کر لیا
ویسل بلوور قانون تیار،اداروں میں کرپشن کی نشاندہی کرنیوالے کا نام صیغہ راز میں رکھا جائیگا
سروس ٹربیونل فعالی کی حکمت عملی مکمل،قانونی مسودے وزیر اعظم سیکرٹریٹ کوبھجوا دیئے

اسلام آباد(دانیال قریشی سے)وفاقی وزیر برائے قانون و انصاف بیرسٹر فروغ نسیم کو یکم دسمبر کو عہدہ سنبھالے ہوئے 100دن مکمل ہونگے ، وزیر اعظم عمران خان کی جانب سے دیا جانے والا خصوصی ٹاسک 100روز پورے ہونے سے قبل ہی مکمل کرلیا گیاہے ،ویسل بلوور قانون تیار، کرپشن کی نشاندہی کرنے والے افراد کو نام صیغہ راز میں رکھا جائے اور خصوصی انعام بھی دیا جائے گا، ذرائع قانون وانصاف کے مطابق آئندہ چند روز میں اہم اعلانات بھی متوقع ہیں ، سول سرونٹس سے متعلق نیا قانون تیار ،عدالتوں کا بوجھ کم کرنے کیلئے سروس ٹربیونل کو فعال بنانے کی حکمت عملی مکمل کرلی گئی ہے ، سول مقدمات کے حوالے سے بھی قانونی مسودہ تیار نئے قانون کے مطابق سول مقدمات30سے 40سال کی بجائے 2سال میں مکمل ہوجائیں گے ، وزارت قانون و انصاف نے خواتین سے متعلق قانون سازی میں بھی زور دیتے ہوئے قانونی مسودہ تیار کرلیا ہے ، وزیر قانون نے 100روزہ ایجنڈے پر کام مکمل کرکے قانونی مسودے وزیر اعظم سیکرٹریٹ بھجوا دیئے ہیں جنہیں جلد ہی قانونی شکل دینے کیلئے اسمبلی لایا جائے گا۔ وزارت قانون و انصاف نے اپنے100دن کے ایجنڈے پر کام مکمل کر لیا ،وفاقی وزیر برائے قانون و انصاف بیرسٹر فروغ نسیم کو یکم دسمبر کو عہدہ سنبھالنے 100 دن مکمل ہو جائیںگے جبکہ وزارت قانون کو دئیے گئے تمام ٹاسک 3ہفتے قبل مکمل کر لئے گئے ہیں ذرائع کے مطابق آئندہ دنوں میں اہم اعلانات متوقع ہیں،(WHISTLE BLOWER)ویسل بلوور قانون تیار کرلیاگیا ہے جس کے مطابق اہم سرکاری ادارو ں میں کرپشن کی نشاندہی کرنے والے افراد کا نام صیغہ راز میں رکھا جائے گا جبکہ خصوصی انعام واکرام سے بھی نوازا جائے ، ذرائع کا کہنا ہے کہ کرپشن کی نشاندہی کرنے والے افراد کو کرپشن کی نذر ہونے والی رقم کا 20فیصد حصہ دیا جائے گا، سول سرونٹس سے متعلق قانونی مسودہ بھی تیار کرلیا گیا ہے جس کے مطابق سروسز ٹربیونل کو مکمل طور پر فعال بنایا جائے گااور سول سروس سے متعلق مقدمات کا بوجھ عدالتوں سے ہٹا کر ٹربیونل میں ٹرائل کیئے جائیں گے ، غریب اور بے سہارا خواتین وبچوں کو فوجداری مقدمات میں مدد فراہم کرنے کیلئے لیگل ایڈ اینڈ جسٹس اتھارٹی کا قیام عمل میں لایا جائے گا جس کے ذریعے غریب افراد کو وکیل اور مقدمات میں آنے والے اخراجات دیئے جائیں گے جبکہ جیلوں میں قید بچوں اور خواتین کو ضمانت ، پنالٹی اور جرمانے کی مد میں مالیاتی مدد بھی کی جائے گی ، ذرائع قانون وانصاف کا کہنا ہے کہ لیگل ایڈ اینڈ جسٹس اتھارٹی میں ممتاز ومعروف وکلاء پر مشتمل لیگل پینل بھی تشکیل دیا جائے گا،نئے قوانین کے مطابق سول مقدمات ( دیوانی ) 30سے40سال کی بجائے دو سال میں نمٹائے جائیں گے ،ذرائع کا کہنا ہے کہ خواتین کے حقوق کیلئے قانون سازی بھی عمل میں لائی گئی ہے جس کے تحت وفاق اور چاروں صوبوں میں قائم خواتین محتسب کو فعا ل بنایا جائے گا۔
ٹاسک مکمل


© Copyright 2018. All right Reserved